پھیپھڑوں میں پانی کیوں آتا ہے؟

اگر انجائنا ، ھارٹ اٹیک یا دل کے پٹھوں کی بیماری کی بر وقت تشخیص ، علاج نہ کیا جائے اور ان عوامل کو کنٹرول نہ کیا جائے جو ان بیماریوں کا سبب بنے تھے، تو انجیو پلاسٹی یا بائی پاس سرجری ھونے کے باوجود انسان کے دل کے پٹھے اتنا کمزور ھوجاتے ہیں کہ انکی خون کو آگے پورے جسم میں پمپ کرنے کی صلاحیت خطرناک حد تک کم ھوجاتی ہے ۔ خون کا دباؤ پیچھے پھیپھڑوں میں اتنا زیادہ ھوجاتا ہے کہ خون کا پانی پھیپھڑوں میں اکٹھا ھونے کی وجہ سے مریض کا سانس رک جا تا ہے ۔ ساری رات بیٹھ کر اور کھانسی کرتے گزار دیتے ہیں ۔ جگر پھول جاتا ہے ۔ پیٹ کے اوپر کے حصے میں درد ھوتا ھے ، بھوک ختم ھوجاتی ہے۔ شدید کمزوری ھوجاتی ہے ۔ جسم پر سوجن آجاتی ہے۔
طبی اصطلاح میں اس بیماری کو پلمونری اوڈیما کہتے ہیں ۔ اس بیماری کی تشخیص اور علاج میں دیر یا غفلت جان لیوا ھو سکتی ہے ۔
سینے کے ایکس ریز دیکھیں کہ دل کے پٹھے کمزور ھوکر کس طرح پھیل گئے ہیں اور بیمار دل صحتمند دل کے مقابلے میں کتنا بڑا نظر آرھا ہے ۔
ہم دل کے امراض سے کیسے محفوظ رھ سکتے ہیں ؟؟؟؟
بہت آسان جواب !
زندگی کے تمام معمولات میں اعتدال ، سادہ مگر محنت و مشقت کی زندگی ، سادہ گھریلو خوراک ، مثبت ذہن اور دین سے نزدیکی کہ اللہ کے ذکر سے دلوں کو اطمینان حاصل ھوتا ہے ۔
ڈاکٹر سید جاوید سبزواری ۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں