نہال ہاشمی کی پارٹی رکنیت معطل

اسلام آباد: وزیراعظم نواز شریف نے سینیٹر نہال ہاشمی کے غیر ذمہ دارانہ بیان پر انہیں طلب کرتے ہوئے ان کے خلاف انضباطی کارروائی کا حکم دے دیا ہے۔
وزیراعظم نواز شریف نے سینیٹر نہال ہاشمی کو وزیراعظم ہاؤس طلب کر لیا ہے اور پارٹی پالیسی اور ڈسپلن کی خلاف ورزی پر نہال ہاشمی کے خلاف انضباطی کارروائی کا حکم دیا ہے۔ دوسری جانب ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم نواز شریف سینیٹر نہال ہاشمی سے ان کے غیر ذمہ دارانہ بیان پر سینٹ کی رکنیت سے استعفیٰ لیں گے۔
وزیراعظم کے معاون خصوصی آصف کرمانی اور خواجہ سعد رفیق نے بھی سینیٹر نہال ہاشمی کے بیان کی سختی سے مذمت کرتے ہوئے اسے پارٹی پالیسی کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ نہال ہاشمی کی تقریر ان کی ذاتی رائے تھی جس پر پارٹی قیادت نے ان سے وضاحت طلب کر لی ہے۔ تحفظات کے باوجود اداروں کے کام میں کسی کو مداخلت کی اجازت دیں گے نہ برداشت کریں گے، پر امن جمہوری رویے اور جماعتی ڈسپلن کا ہر قیمت پر تحفظ کیا جائے گا۔
وزیر ریلوے نے کہا کہ نہال ہاشمی کے بیان کی آڑ میں عمران ستی ساوتری بننے کی کوشش نہ کریں، عمران اپنے ساتھیوں کو پوری ڈھٹائی سے آئے روز اداروں اور مخالفین پر حملوں پر اکساتے ہیں، عمران خان نے پارلیمنٹ ہاؤس اور پی ٹی وی پر دھاوے کی خود قیادت کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ عدلیہ اور جے آئی ٹی کو دباؤ میں لانے کے لیے پی ٹی آئی کا رویہ شرمناک رہا ہے، دوسروں پر انگلی اٹھانے سے پہلے پی ٹی آئی کے بے لگام سربراہ اپنے گریبان میں جھانکیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں