مولانا اعظم طارق کا قاتل تیرہ سال بعد گرفتار

تیرہ سال بعد مولانا اعظم طارق کے قتل میں ملوث ملزم سبطین کاظمی کو اسلام آباد ائیر پورٹ سے گرفتار کر لیا گیا.
ذرائع کے مطابق ملزم سبطین کاظمی نجی پروازکےذریعےدوحہ قطر کے راستے انگلینڈ جانے کی کوشش کررہا تھا
ملزم سبطین کاظمی کے سر پر 10 لاکھ روپے کا انعام تھا۔ سبطین کاظمی کا نام ای سی ایل میں نہیں تھا
مولانا اعظم طارق کو 14 برس قبل اکتوبر 2003 میں اسلام آباد کے داخلی راستے پرفائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا تھا۔
اس کیس میں متعدد ملزمان کو گرفتار کیا گیا تاہم مرکزی ملزم سبطین کاظمی اب تک روپوش تھا ۔ پولیس نے اسے اشتہاری قرار دیا تھا۔
مولانا اعظم طارق کا تعلق سپاہ صحابہ سے تھا
ملزم سید سبطین کاظمی نجی پرواز کے ذریعے بیرون ملک جانے کی کوشش میں تھا ایف آئی اے نے ملزم کے بارے میں پہلے سے موصول اطلاع پر ائیر پورٹ پر عملے کو الرٹ کر رکھا تھا
ملزم کا نام سی ٹی ڈی اسلام آباد کی سال 2009میں شائع ہونے والی پہلی ریڈ بک میں بھی انتہائی مطلوب اور مفرور دہشت گردو ں کی فہرست میں شامل تھا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں