مسلم ممالک میں سفارتکاروں کو نقصان پہنچانا حرام قرار

سعودی عرب کی سینئر علماء کو نسل نے مسلم ممالک میں داعش اور القاعدہ کی جانب سے سفارتی عمارتوں اور اہلکاروں پر حملوں کو اسلام کے منافی قرار دے دیا ہے. ان کا کہنا تھا کہ مسلمانوں کی سر زمین پر کسی غیر مسلم کو قتل کرنا دور کی بات نقصانپہنچانے کی بھی اجازت نہیں ہے.
سعودی علما نے اس حوالے سے رسول پاک کی سیرت کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ مسلمہ نامی شخص جس نے نبی کریم کی شان میں گستاخانہ کلمات کہے اور ان کلمات کو نبی کریم تک پہنچانے کے لیے عبادہ ابن الحریت نامی شخص کو نبی اکرم کے پاس بھیجا جس نے گستاخانہ کلمات نبی کریم تک پہنچائے تھے.نبی کریم نے عبادہ ابن الحریت کے قتل کی بھی ممانعت فرمائی.
سعودی علماء کا مزید کہنا ہے کہ سفارتی عملے سے منصوب یہ قانون
انسانی حقوق کے تمام قوانین سے پہلے اسلام نے رائج کیا تھا.اور نبی کریم نے سفارتی عملے کو کسی بھی سزا سے مستثنی قرار دیا تھا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں