عالمی ادارہ صحت ڈبلیو ایچ او نے ڈیمینشیاکا عالمی پلان منظور کر لیا

سویزر لینڈ کے شہر جنیوا میں جاری ورلڈ کیلتھ اسمبلی میں ڈبلیو ایچ او نے ڈیمینشیا (ایلزائیمر)کا عالمی پلان پاس کر دیا.
ڈبلیو ایچ او کے تمام 194 ممالک نے متفقہ طور پر یہ پلان پاس کیا ہے. ڈیمینشیا کا عالمی پروگرام الزائیمر کے علاج اور اس سے متاثرہ لوگوں کی دیکھ بال کے ایک نئے دور کا آغاز کرے گا.
اور حکومتوں کو جلد از جلداس پر عمل پیرا ہونا ضروری ہوگا.اس پلان کے تحت دنیا کے تمام ممالک کو قومی ڈیمینشیا پلان بنانے ہونگے.
ڈاکٹر حسین جعفری سیکرٹری جنرل ایلزائیمرز پاکستان نے کہا کہ اس پلان کو منظور کرنے والے ممالک میں پاکستان بھی شامل ہے. اب حکومت کا فرض ہے کہ فوری اقدامات کرے تا کہ ایلزائیمر کے علاج سے متعلق سہولیات ملک کے تمام کونوں تک پہنچائی جا سکیں.اس کے ساتھ ساتھ حکومتی سطح پر شعور بھی اجاگر کیا جائے.تا کہ معاشرتی سطح پر ایسے مریضوں کو مسی قسم کے منفی رجحانات کا سامنا کرنا نا پڑے.
اس وقت دنیا بھر میں 5 کروڑ افراد الزائیمر میں مبتلا ہیں یہ تعداد 2050 تک تین گناہ بڑھ جائے گی یعنی 15 کروڑ کو بائے گی. دنیا بھر میں ہر 3 سیکنڈ بعد ایک شخص اس مرض کا شکار ہو جاتا ہے.اکثر افراد میں الزائیمر کی تشخیص بھی نہیں ہوتی اور نہ ہی ان کو مدد فراہم ہوتی ہے. اس وقت پاکستان میں دس لاکھ کے قریب الزائیمر کے مریض ہیں جس میں سے بہت کم کی تشخیص ہو پاتی ہے.اور زیادہ افراد بغیر علاج کے زندگی گزار دیتے ہیں.
گلین ریس چئیر پرسن ایلزائیمر زڈیزیز انٹرنیشنل نے اس موقع پر اپنے پیغام میں کہا کہ ایلزائیمر وہ دائمی مرض ہے جس کا کوئی علاج نہیں .کم از کم الزائیمر پر خرچ ہونے والی رقم کا ایک فیصد ریسرچ کے لیے وقف ہونا چاہیے.عالمی پلان ترتیب دینے سے پہلے ایلزائیمر کے مریضوں اور ان کے لواحقین سے بھی مشورہ کیا گیا اس پلان میں تمام رکن ممالک کے لیے شعور اور اگاہی مہم اور ایلزائیمر ز دوست معاشروں کے قیام کے اہداف مقرر کیے گئے ہیں اس کے ساتھ ساتھ تمام ممالک میں طبی عملے اور مریضوں کے لواحقین کی ٹریننگ بھی اہم اہداف میں شامل ہے.

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں