شیخوپورہ مین بازار خریداری کرنے والی خواتین کو مشکلات کا سامنا.

نمائندہ ( خصوصی شیخوپورہ )جوں جوں رمضان المبارک کے روزے گزر رہے ہیں اور عید قریب آرہی ہے خواتین کیلئے بازاروں میں خریداری نہایت مشکل ہوتی جارہی ہے شیخوپورہ شہر کا خواتین کیلئے خریداری کے حوالے سے مصروف ترین بازار گلی ککے زئیاں قرب وجوار سے خریداری کیلئے آنے والی خواتین کیلئے نوگو ایریا بن گیا، ایک اندازے کے مطابق ماہ رواں کے دوران خواتین سے پرس چھیننے ، اشیاء چرائے جانے اوراوباش نوجوانوں کی طرف سے چھیڑ خانی کے درجنوں واقعے رونما ہوچکے ہیں جبکہ مذکورہ بازار میں خریداری کے حوالے سے خواتین کو لاحق سب سے بڑی دشواری عین بازار کے وسط میں موٹر سائیکلوں کا کھڑا کیا جانا ہے جس سے ایک نہایت کم وسعت بازار میں تل رکھنے کی جگہ میسر نہیں اور ایسے میں نہ صرف خواتین کا گزرنا نہایت محال ہے بلکہ اوباش نوجوانوں کی طرف رش کا فائدہ اٹھا کر خریداری کیلئے آئی خواتین سے چھیڑ خانی کے واقعات معمول بن چکے ہیں تو دوسری طرف رہی سہی کسر مقامی دکانداروں کی طرف سے اپنی دکانوں کے آگے لگائے گئے اسٹالز نے نکال دی ہے جس کے باعث اس تقریباً 20فٹ بازار کی وسعت گھٹ کر قریب 8فٹ رہ گئی ہے اور اس وسعت کو بھی موٹر سائیکلیں کھڑی کرکے ختم کردیا گیا ہے ، اس بابت یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ مذکورہ بازار میں اسٹالز کی صورت میں قائم تجاوزات کے مالکان کو ٹی ایم اے کے عملہ تہہ بازاری کو مبینہ سرپرستی حاصل ہے اور عملہ تہہ بازاری مبینہ بھتہ خوری کے باعث تجاوزات کو تحفظ فراہم کرنے کیساتھ ساتھ انہیں کاروائی سے مستثنیٰ قرار دیئے ہوئے ہے، یہی وجہ ہے کہ اس بازار میں قائم تجاوزات کے خلاف ابھی تک کوئی موثر کاروائی ہوتی نظر نہیں آئی ہے، قابل ذکر امر ہے کہ چند ماہ قبل مذکورہ بازار میں موٹر سائیکلوں کا داخلہ روکنے کیلئے بازار کے دونوں اطراف آہنی پول نصب کئے گئے تھے مگر یہ اقدام بھی کارگر ثابت نہ ہو سکاجبکہ اس اقدام کو مقامی تاجروں کی طرف سے سبوتاژ کر نے کا انکشاف ہوا اور نہ تو ٹی ایم اے نے اس پر کوئی نوٹس لیا اور نہ ہی بازار میں موٹر سائیکلوں کا داخلہ روکنے کیلئے کوئی دیگر اقدام سامنے آیا اسی طرح سکیورٹی کے حوالے سے بھی سابق ڈی پی او کی طرف سے بازار کے دونوں اطراف پولیس اہلکار تعینات کرنے کا اقدام انکے تبادلے کیساتھ ہی رخصت ہوگیا جبکہ دوسری طرف ڈی سی او شیخوپورہ کی طرف سے نہ تو اصلاح وا حوال یقینی بنانے اور عوامی شکایات کے ازالہ کیلئے ٹی ایم اے کے عملہ تہہ بازاری سمیت دیگر متعلقہ افسران کی باز پرس کی گئی اور نہ ہی تاجروں کو تجاوزات ہٹانے یا موٹر سائیکلیں کھڑی نہ کرنے کا پابند بنایا گیاہے جس پر شہری حلقوں خصوصاً خواتین میں شدید تشویش اور غم وغصہ کی لہر پائی جارہی ہے جبکہ اس بابت عوامی سماجی حلقوں کا کہنا کہ جب تک ڈی سی شیخوپورہ ٹی ایم اے کے عملہ تہہ بازاری کا قبلہ درست نہیں کرتے اصلاح و احوال ممکن نہیں جبکہ ڈی پی او شیخوپورہ کو بھی سکیورٹی امور کے پیش نظر پولیس اہلکاروں کی بازار کے دونوں اطراف ڈیوٹیاں سرانجام دینے کے حوالے سے بھی ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھانا ہوں گے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں