سول ملٹری تعلقات پر سیاست نہیں ہونی چاہیے. چودھری نثار

وزیر داخلہ چوہدری نثار کا کہنا ہے کہ سول ملٹری تعلقات حساس معاملہ ہے اس کا تماشا نہیں بنانا چاہیئے اور نہ ہی اس پر سیاست ہونی چاہیئے۔
اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ نیوز لیکس اتنا بڑا معاملہ نہیں تھا جتنا اسے بنا دیا گیا تھا، اگر حکومت نے نیوز لیکس کی رپورٹ چھپانی ہوتی تو کمیٹی ہی نہ بنائی جاتی، وزیراعظم نے نیوز لیکس کے معاملے پر تحقیقاتی کمیٹی کی رپورٹ پر من و عن عمل کرنے کے احکامات جاری کئے تھے، نیوز لیکس کے حوالے سے تحقیقاتی کمیٹی کا نوٹی فکیشن جاری ہونے کے بعد معاملہ ختم ہو چکا اب اس پر بیان بازی پریشان کن ہے، نیوز لیکس کی رپورٹ باہمی اتفاق رائے کے بعد جاری کی گئی۔
وزیر داخلہ نے کہا کہ نیوز لیکس کی رپورٹ کے معاملے پر تاثر دیا گیا کہ سول حکومت اور ملٹری آمنے سامنے آ گئے ہیں، دونوں اداروں کے درمیان تعلقات میں کوئی خرابی نہیں تھی البتہ طریقہ کار پر اختلاف رائے تھا جو گزشتہ روز دور ہو گیا۔ سول ملٹری تعلقات حساس معاملہ ہے اس کا تماشا نہیں بنانا چاہیئے اور نہ ہی اس معاملے پرسیاست ہونی چاہیئے۔ پوری دنیا میں سول ملٹری تعلقات پر سیاست نہیں ہوتی لیکن پاکستان میں ہوتی ہے، عوام اور ملک کو مسائل کا سامنا ہے اس پر بات کریں اور سیاست کریں۔
چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ کچھ لوگوں نے جان بوجھ کر ایسی صورتحال پیدا کی جو پاکستان کے مفاد میں نہیں ہے، ہمارے دشمن چاہتے ہیں کہ پاکستان میں سول ملٹری اداروں کی لڑائی ہو اور تماشا لگے، جتنی سول ملٹری ہم آہنگی کی ضرورت آج ہے پہلے کبھی نہیں تھی، اس میں رخنہ ڈالنے اور غلط طریقے سے پیش کرنے سے پاکستان کی خدمت نہیں ہو گی، جن لوگوں نے سول ملٹری تعلقات پر کرکٹ، ہاکی یا سیاست کھیلنی ہے وہ کوئی اور پچ تلاش کریں، یہ بہت بڑی زیادتی ہے کیونکہ ہم پاکستان کے مفاد اور سلامتی اور انتہائی حساس معاملات سے کھیل رہے ہیں۔
متحدہ بانی کے حوالے سے چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ الطاف حسین کے ریڈ وارنٹ کے لیے کام جاری ہے جو بہت جلد مکمل ہوجائے گا، متحدہ بانی کے خلاف کچھ دستاویزات صوبوں سے لینی ہیں تاہم الطاف حسین کے خلاف 15 جون سے پہلے ریڈ وارنٹ جاری ہو جائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں