خاتون نے رکشے میں بچے کو جنم دےدیا

سکھر: سرکاری اسپتال ميں سہولیات کے فقدان کے باعث خاتون نے رکشہ ميں ہی بچے کو جنم دے دیا۔
سندھ میں پیپلزپارٹی گزشتہ 9 برسوں سے برسراقتدار ہے لیکن حقومتی سطح پر دعوؤں کے باوجود صورت حال اس قدرخراب ہے کہ سرکاری اسپالوں میں بنیادی سہولیات تک دستیاب نہیں اور لوگ اپنے پیاروں کو لیے دردر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبورہیں، ایسا ہی ایک واقعہ سکھر میں پیش آیا ہے جہاں ایک خاتون نے قریبی سرکاری اسپتال میں بنیادی سہولیات تک نہ ہونے کی وجہ سے رکشے میں بچے کو جنم دیا ہے۔
سکھر میں لکھی کی رہائشی خاتون کو زچگی کے لیے انور پراچہ اسپتال لایا گیا۔ اسپتال میں آکسیجن کی سہولت نہ ہونے کی وجہ سے انتظامیہ نے خاتون کو سول اسپتال بھیج دیا۔ خاتون کی حالت خراب ہونے کے باوجود اسے ایمبولینس تک نہ مل سکی اور پھراسے رکشے میں سول اسپتال لے جایا گیا لیکن خاتون نے بچے کو راستے میں رکشہ ميں ہی جنم دے دیا۔
ساتھی خاتون رکشے سے اتر کر بھاگ کے اسپتال پہنچی لیکن آکسیجن نہ ہونے کی وجہ سے بچہ دم توڑ گیا.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں