جے آئی ٹی کو درپیش مسائل سپریم کورٹ میں داخل کرا دئیے گئے

نیوز ویوز (اسلام آباد):اٹارنی جنرل پاکستان اشتر اوصاف علی نے پاناما پیپرز کیس کے حوالے سے وزیراعظم نواز شریف اور ان کے اہل خانہ کے اثاثوں کی تحقیقات کرنے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کو درپیش مشکلات سے متعلق جواب سپریم کورٹ میں جمع کرادیایاد رہے کہ رواں ہفتے سپریم کورٹ میں پاناما لیکس عملدرآمد کیس کی سماعت کے دوران جے آئی ٹی نے الزام عائد کیا تھا کہ متعدد حکومتی ادارے پاناما پیپرز کی تحقیقات کے لیے ‘شواہد اکھٹا کرنے میں رکاوٹ پیدا کررہے ہیںجے آئی ٹی نے الزام لگایا تھا کہ سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی)، قومی احتساب بیورو (نیب)، وفاقی ریونیو بورڈ (ایف بی آر) اور انٹیلی جنس بیورو (آئی بی) ریکارڈز کی حوالگی میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں جبکہ یہ تمام ادارے متعلقہ دستاویزات میں جعلسازی اور چھیڑ چھاڑ کے بھی مرتکب ہیںجس پر عدالت عظمیٰ نے اٹارنی جنرل کو جے آئی ٹی کے تحفظات دور کرنے کی ہدایت کی تھی آج عدالت عظمٰی میں اٹارنی جنرل کی جانب سے جمع کرائے جانے والے جواب میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر)، سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی)، قومی احتساب بیورہو (نیب)، وزارت قانون، انٹیلی جنس بیورو (آئی بی) اور وزیراعظم ہاو ¿س کا موقف شامل کیا گیاجواب کے مطابق وزیراعظم ہاو ¿س نے جے آئی ٹی کے تمام الزامات مسترد کرتے ہوئے کہا کہ جے آئی ٹی نے اپنی درخواست میں فون ٹیپ اور گواہان کی مانیٹرنگ کا اعتراف کیا ہے وزیراعظم ہاو ¿س نے جواب میں موقف اختیار کیا کہ فون ٹیپ کرنا اور گواہوں کی مانیٹرنگ کرنا قانون کی خلاف ورزی ہے جواب کے مطابق انٹیلی جنس بیورو (آئی بی) نے جے آئی ٹی ممبر بلال رسول اور ان کے اہل خانہ کے فیس بک اکاو ¿نٹ ہیک کرنے کے الزامات مسترد کردیے اور موقف اپنایا کہ جے آئی ٹی کے کسی رکن کا فیس بک اکاو ¿نٹ ہیک نہیں کیا گیااس کے علاوہ وزارت قانون نے بھی جے آئی ٹی کے تمام الزامات مسترد کردیے اور کہا کہ قانونی معاونت سے متعلق خط تین دن میں جاری کردیا گیا تھادوسری جانب ایف بی آر، ایس ای سی پی اور نیب نے بھی پاناما لیکس مشترکہ تحقیقاتی کمیٹی کےالزمات مسترد کردیے ایف بار کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی نے چار مرتبہ 40 سال پرانا ریکارڈ مانگا تھا اور متعلقہ ریکارڈ کم از کم وقت میں جے آئی ٹی کو فراہم کردیا گیانیب کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی کے رکن عرفان منگی کو عدالتی احکامات کی روشنی میں جے آئی ٹی تشکیل دینے سے قبل نوٹس دیا گیا جب کہ ان کے علاوہ نیب کے دیگر 77 افراد کو بھی نوٹسز جاری کیے گئے تھے ایس ای سی پی نے جواب میں موقف اپنایا کہ ریکارڈ میں ٹمپرنگ اور جعلسازی سے متعلق جے آئی ٹی کے الزامات غلط اور بے بنیاد ہیںاٹارنی جنرل پاکستان نے کہا کہ ’ایسا لگتا ہے کہ جے آئی ٹی نے مواد اکھٹا کرنے میں کم وقت اور توانائی صرف کی ہے اور ٹی وی ٹاک شوز دیکھنے، آرٹیکل پڑھنے اور سوشل میڈیا کی مانیٹرنگ میں اپنا وقت لگایا ہے خیال رہے کہ اٹارنی جنرل کی جانب سے عدالت کو جے آئی ٹی کی ایک درخواست پر جواب دینا تھا، جس میں ٹیم نے عدالت کو خود کو درپیش مسائل اور تحقیقات میں سرکاری اداروں کی مداخلت کی نشاندہی کی تھی، جس پر عدالت نے اے جی کو جے آئی ٹی کے تحفظات دور کرنے اور اس حوالے سے اقدامات کے لیے تجاویز پیش کرنے کو کہا تھااٹارنی جنرل نے عدالت سے درخواست کی تھی کہ اس کیس کی سماعت کو منگل (20 جون) تک کے لیے ملتوی کردیا جائے تاہم عدالت نے فیصلہ کیا کہ اس معاملے پر پیر (19 جون) کو دوبارہ بات ہوگی یاد رہے کہ رواں برس 20 اپریل کو سپریم کورٹ نے پاناما لیکس کیس کے

تاریخی فیصلے میں وزیراعظم نواز شریف کے خلاف مزید تحقیقات کے لیے فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کے اعلیٰ افسر کی سربراہی میں جے آئی ٹی بنانے کا حکم دیا تھاجے آئی ٹی کا سربراہ وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل واجد ضیاءکو مقرر کیا گیا ہے جبکہ دیگر ارکان میں ملٹری انٹیلیجنس (ایم آئی) کے بریگیڈیئر کامران خورشید، انٹر سروسز انٹیلیجنس (آئی ایس آئی) کے بریگیڈیئر نعمان سعید، قومی احتساب بیورو (نیب) کے گریڈ 20 کے افسرعرفان نعیم منگی، سیکیورٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن آف پاکستان (ایس ای سی پی) کے بلال رسول اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے عامر عزیز شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں