بجٹ سے پہلے ڈی چوک پر کسانوں کا احتجاج

وفاقی دارالحکومت کے ریڈ زون میں حکومتی پالیسیوں کے خلاف احتجاج کرنے والے کسانوں پرپولیس کی شیلنگ کے بعد ڈی چوک میدان جنگ بن گیا.
اسلام آباد میں ڈی چوک پرکسانوں کی جانب سے بجٹ میں مراعات کے مطالبے کے لیے احتجاج کیا جارہا تھا، ان کا کہنا تھا کہ بار دانے کے معاملے پر ہمیں پٹواریوں کے رحم وکرم پر چھوڑ دیا گیا ہے، جنہیں کاشتکاری کے بارے میں کچھ علم نہیں وہ کسانوں کے لیے پالیسیاں بنارہے ہیں، بجٹ میں کسانوں کے لیے تجاویزتو پیش کردی جاتی ہیں مگر ان پر عمل نہیں ہوتا، ، ہم محنت کرکے فصلیں تیار کرتے ہیں لیکن اس کا کوئی منافع نہیں ملتا۔ اسحاق ڈار ہمیں مارنا چاہتے ہیں تو سڑکوں پر ماردیں لیکن کسان دشمن بجٹ ہمیں کسی صورت قبول نہیں۔
کسان اتحاد کے رہنماؤں نے مطالبہ کیا کہ تمام اقسام کی کھادوں کی ان پٹ اورآؤٹ پٹ سے جی ایس ٹی ختم، زرعی بجلی کا دن رات کے لئے بجلی کا ٹیرف چار روپے فی یونٹ مقرر، زرعی بجلی کے بقایاجات معاف اور زرعی مشینری سے تمام ٹیکس ختم کئے جائیں۔ ایک موقع پر کسانوں سے اظہار یکجہتی کے لئے خورشید شاہ بھی مظاہرے میں شریک ہوئے لیکن وہ اپنی حمایت کی یقین دہانی کے بعد واپس چلے گئے۔
احتجاج کے دوران صورت حال اس وقت خراب ہوئی جب پولیس نے کسانوں پردھاوا بول دیا۔ مظاہرین کومنتشرکرنے کے لیے پولیس نے آنسو گیس کی شیلنگ اورپانی کی توپ کا استعمال کیا، جس پرکسانوں نے بھی ہتھراؤ شروع کردیا ، مظاہرین کے بھرپور جواب پر پولیس اہلکار اپنی گاڑیاں چھوڑ کرپیچھے ہٹ گئے۔ اسسٹنٹ کمشنرکی ہدایات کے باوجود پولیس اہلکارآگے بڑھنے سے گریزاں دیکھے گئے۔ پولیس نے کئی کسانوں کوگرفتارکرکے تھانے منتقل کردیا ہے جب کہ ٹریفک بھی بحال ہوگیا ہے۔
دوسری جانب تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان نے کسانوں پرحکومتی تشدد کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت کی نظرمیں کسانوں، مزدوروں اور محنت کشوں کی کوئی اہمیت نہیں، اپنے حقوق کیلیے سڑکوں پرنکلنے والے کسانوں پرتشدد آمرانہ سوچ کا مظہرہے، حکومت طاقت آزمانے کے بجائے کسانوں کو ان کے حقوق دے۔
پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیرمین آصف زرداری نے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسان اپنا حق مانگ رہے ہیں، رعایت نہیں، انہیں انتہائی قدم اٹھانے پرمجبورنہ کیا جائے، سبسڈی دینے سے ملک خوراک میں خود کفیل ہوگا، انہوں نے پیپلز پارٹی رہنماؤں کو ہدایت دی کہ وہ کسانوں پرتشدد کے خلاف پارلیمنٹ میں آواز اٹھائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں