اپنے دل کی صحت کا اندازہ لگائیے

کیا آپ تمباکو یا غیر صحتمندانہ مشروبات کا استعمال کرتے ہیں ۔
کیا آپ مرغن کھانوں کے شوقین ہیں ۔
کیا آپ کا وزن آپکے قد اور آپکی جسامت کے لحاظ سے بہت زیادہ ہے
کیا آپ ہر کام بہت تیزی سے کرتے ہیں ۔
کیا آپ جلد غصے میں آجاتے ہیں ۔
کیا آپ میں ھائی بلڈ پریشر، شوگر کی بیماری ، خون میں کولیسٹرول ، یورک ایسڈ کی زیادتی موجود ہے ۔
کیا بچپن میں گلے میں درد، بخار، جوڑوں میں درد یا چلنے میں تکلیف تو نہیں ھوتی تھی ۔
کیا بچپن میں دل کے پیدائشی نقص کی تشخیص کے باوجود علاج نہ کروایا ہو ۔
کیا آپکے والدین یا بہن بھائیوں میں دل کی بیماری موجود ہے ۔
کیا کھانے کے بعد تیز چلنے سے آپکو سینے میں بوجھ، گھٹن ، دباؤ یا درد ہوتا ہے جو بائیں بازو یا دونوں بازؤں یا گردن یا نچلے جبڑے یا کمر میں جاتا محسوس ہوتا ہے ۔ سانس پھولتا ہے ۔ متلی ہو تی ہے۔ پسینہ آتا ہے اور آرام کرنے سے یہ کیفیت ٹھیک ہوجاتی ہے۔
کیا آپ ان علامات کو معدہ اور گیس کی تکلیف یا پٹھوں کا درد سمجھ کر نظر انداز کر رہے ہیں ۔
ان سوالات کا جواب اگر نہیں میں ہے تو آپ یقیناً ایک صحت مند دل کے مالک ہیں اور اگر زیادہ تر جوابات ھاں میں ہیں تو بھی کوئی بات نہیں کیونکہ یہی تو دل کی اچھی بات ہے معاف کرنے کی ، آپ اگر منفی عادات اور رویوں کو مثبت انداز میں تبدیل کرلیں تو سب اثرات آہستہ آہستہ ختم ھونا شروع ھوجاتے ہیں اور دل ان تمام زیادتیوں کو بھلا کر دوبارہ سے صحتمند انداز میں دھڑکنا شروع کردیتا ہے
آئیں ہم سب مل کر اپنے آپ کو اور خاندان کے تمام افراد کو دل کی بیماریوں سے بچائیں ۔

ڈاکٹر سید جاوید سبزواری ۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں