انٹرنیشنل کنسورشیئم آف انویسٹیگیٹو جرنلسٹس، مکلیچی اور میامی ہیرلڈ کو صحافت کے پُولٹزر انعام سے نوازا گیا

دنیا بھر میں ٹیکس چوری کے وسیع انتظامی ڈھانچے کا پردہ فاش کرنے پر انٹرنیشنل کنسورشیئم آف انویسٹیگیٹو جرنلسٹس، مکلیچی اور میامی ہیرلڈ کو صحافت کے پُولٹزر انعام سے نوازا گیا ہے۔
یہ اعزاز چھ براعظموں پر 300 مختلف صحافیوں کی مشترکہ کوششوں کا نتیجہ ہے۔
یاد رہے کہ پاناما پیپرز شائع ہونے کے بعد پاکستان سمیت متعدد ممالک سیاستدانوں اور حکام کو قانونی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔
اس کے علاوہ امریکہ میں صدارتی انتخابات کے دوران ریپبلکن امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کے فلاحی خدمات کرنے کے دعووں کی جانچ پڑتال کرنے والے صحافی کو بھی پیولٹزر انعام دیا گیا ہے۔
پیولٹزر انعام کی جیوری نے کہا کہ واشنگٹن پوسٹ کے نامہ نگار ڈیوڈ فیرن تھولڈ کے مضامین نے ’شفاف اور واضح صحافت کا نمونہ پیش کیا‘ جس سے ٹرمپ کی سخاوت اور دریا دلی پر شکوک و شبہات پیدا ہوتے ہیں۔
فیرن تھولڈ نے ٹرمپ کی دریا دلی کے دعووں کی اس وقت جانچ شروع کی جب انھوں نے انتخابات کے دوران جنگ سے لوٹے فوجیوں کی تنظیم کے لیے 60 لاکھ امریکی ڈالر دینے کا عہد کیا تھا۔
فیرن تھولڈ نے اپنی تفتیش کے دوران یہ بتایا کہ فوجی تنظیم سے کیا جانے والا عہد پورا کیا گیا لیکن ڈونلڈ ٹرمپ کی بہت سی خیراتی سرگرمیوں کے بیان میں مبالغے سے کام لیا گيا۔
دیگر پیولٹزر انعام جیتنے والوں میں نیویارک ڈیلی نیوز اور تفتیشی صحافت کے لیے مخصوص آن لائن پلیٹ فارم پروپبلکا شامل رہے


نیویارک ٹائمز کے سٹاف کو بین الاقوامی رپورٹنگ کا انعام دیا گیا۔ انھوں نے دوسرے ممالک میں روسی قوت کے اظہار کے لیے صدر والادیمیر پوتن کی کوششوں پر مضامین لکھے۔
اسی اخبار کے سی جے چیورز کو ایک امریکی فوجی کے جنگ کے بعد تشدد کی راہ پر چلنے کی تفصیل کو قلمبند کرنے کے لیے فيچر رائٹنگ کے ایوارڈ کا حقدار قرار دیا گيا۔
پیولٹزر انعامات سنہ 1917 سے دیے جا رہے ہیں اور اس بار تمام درجوں کے لیے ڈھائی ہزار سے زیادہ درخواستیں موصول ہوئی تھیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں